News

۔ والدہ کبیر بلوچ    

 

 

بلوچ وطن کی آزادی و تحفظ کے لئے میں‌اپنے بیٹوں کو قربان کرنے کے لئے تیار ہوں۔ چونکہ مادر وطن بلوچستان آج ہم سے قربانی کا تقاضا کررہا ہے جس طرح شہید اکبر بگٹی، شہید میر بالاچ مری، میر اسد مینگل، شہید نواب نوروز خان، شہید حمید بلوچ، اسلم گچکی، شہید شفیع بلوچ، شہید غلام محمد بلوچ، شہید لالا منیر، اور شہید شیر محمد بلوچ، اس سے قبل دیگر ہزاروں معلوم و نامعلوم بلوچوں نے دھرتی ماں کی پکار پر اپنے جانوں کو قربان کیا اس کے علاوہ سردار اختر جان مینگل سمیت دیگر ہزاروں نوجوانوں‌نے جیلوں میں اذیتیں برداشت کیں‌لیکن بلوچستان کی آزادی کے مطالبے سے ایک انچ بھی پیچھے نہیں‌ہٹے آج سیکنڑوں ماؤں نے اپنے جگر کے ٹکڑوں کو وطن پر قربان کیا ہے تو میں بھی اپنے بیٹے کبیر بلوچ و دیگر بیٹوں کو بھی بلوچ وطن کی آزادی کے نام کرتی ہوں۔ میں‌ان بزدل اور ریاستی تنخواہ خوروں سے اپنے بیٹے یا اس کے ساتھیوں‌کی رہائی کی اپیل کسی صورت نہیں کرونگی بلکہ صرف ایک بات کرونگی کہ صرف یہ بتادیں‌کہ ہمارے لخت جگر زندہ ہیں‌یا انہیں شہید کردیا گیا ہے اگر شہید کردیا گیا ہے تو ان کی لاشوں کو ہمارے حوالے کیا جائے

ستائیس مارچ کو خضدار سے دن دہاڑے سیشن کورٹ ڈی آئی جی آفس کے سامنے دوگاڑیوں میں سوار مسلح افراد نے کبیر بلوچ اور اس کے دیگر دو ساتھیوں عطاء اللہ بلوچ اور مشاق بلوچ کو اغواء کرکے لے گئے ان پر فائرنگ بھی کی گئی جو شدید زخمی ہوئے لیکن ایک ماہ گزرے جانے کے باوجود تاحال بازیاب نہیں‌ہوسکے۔

balochistan national party
balochistan national party

Members of Balochistan National Party namely Kabeer Baloch,Attaullah Baloch were abducted by intelligence agencies and security forces on 27th march 2009 near session court of the city of Khuzdar, Balochistan they were beaten badly because of indiscriminate firing and while they were injured they were whisked away by the secret agencies in private vehicles, they were taken into an undisclosed location with their serious bullet wounds, their arrests and were abouts are still un known, family of the abducted are still worried about their condition and well beings,
In another same kind of incident on 25 August, 2009 former Secretary General of BNP Khuzdar Division of Balochistan Mr. Saddullah Baloch was also abducted by intelligencies and his where abouts are still unknown till this day. Protests and ralleys were taken out to demand for their release all over Balochistan and also in Karachi. BNP demands release of these Balochs along with other 8000 thousand missing person from all over Balochsitan abducted by Intelligence Agencies.